asad umar step down as finance minister

پی ٹی آئی کے دماغ مانے جانے والے اسد عمر وزارت خزانہ سے مستعفی ہو گئے

نیو نیوز اسلام آباد : وزیر خزانہ اسد عمر نے آج ٹوئیٹ کے ذریعے بتایا کہ وہ مستعفی ہو رہے ہیں اور کچھ دیر میں پریس کانفرنس کریں گے.

اسد عمر جنہوں نے پریس کانفرنس میں بتایا کہ نئے وزیرخزانہ کیلئے آسان فیصلہ کرنا بہت مشکل ہو گا نئے آنے والے بجٹ میں اس کا بہت اثر پڑے گا.
کیونکہ نیا بجٹ آئی ایم ایف کی شرائط کےس اتھ بنے گا.

اسد عمر جو پاکستان تحریک انصاف کا دماغ سمجھے جاتے تھے انہوں نےآج ایک توئیٹ سے اپنے مستعفی ہونے سے آگاہ کیا اور اس بات کا بھی اعادہ کیا کہ وہ ہر صورت عمران خان کے ساتھ رہیں گے اور انہیں یقین ھے نیے پاکستان کا خواب یہیں سے پورا ہو گا.

اپنی پریس کانفرنس ،میں مزید اسد عمر نے کہا کہ وزیراعظم خان صاحب چاھتے ہیں کہ میں توانائی کی وزارت لوں لیکن میں نے ان سے درکواست کی ہے کہ میں کابینہ کا حصہ نہیں رہنا چاہتا اور میری اس درخواست کو قبول کیا جائے.


اسد عمر نے مزید کہا کہ وہ اپنے حلقے ، اپنے پاکستان تحریک انصاف کے سپورٹرز کے بہت زیادہ شکر گزار ہیں جنہوں نے ہر مشکل وقت میں میرا ساتھ دیا نہ صرف ساتھ دیا بلکہ ہر مشکل وقت میں میرت ساتھ ٹھہرے رہے.

پی ٹی آئی رہنما کا کہنا تھا کہ ہم بہتری کی طرف جا رہے ہیں اور اب ہم اس صورتحال میں نہیں ہیں کہ ہمارے پاس پیسے نہ ہوں ہماری معیشت آئی سی یو سے باھر ھے لیکن ابھی بھی بہت وقت باقی ھے اور ابھی بھی معیشت کے سنبھلنے میں بہت وقت لگے گا.

اسد عمر سے جب کسی سازش کے بارے پوچھا گیا تو انہوں نے کہا کہ مجھے ان سب باتوں سے کوئی واسطہ نہیں ہے اوور نہ ہی میں کسی بھی قسم کی سیاست کا حصہ بننے آیا ہوں مجھے کام کرنا تھا اور میں نے کیا اللہ بہتر جانتا ہے کہ اسد عمر نے کیا غلط کیا اور کیا ٹھیک.

ان کا مزید کہنا تھا کہ وزیراعظم کے بعد سب سے مشکل ڈیوٹی میری لگائی گئی تھی اور میں اپنا کام بخوبی کیا میری دعا اور کوششیں نئے وزیراعظم کے ساتھ ہیں کوئی یہ نہ سمجھے کہ نئے وزیر خزانہ 3 ماہ میں دودھ کی نہریں بہیں گی، پاکستان کے وزیر خزانہ پر 22 کروڑ عوام کی ذمہ داری ہوتی ہے۔
اسد عمر کا کہنا تھا کہ نئے پاکستان کا وژن ان شااللہ ہر صورت پورا ہو گا اور ہم ہر صورت میں وزیراعظم خان صاحب کے اتھ ٹھہرے ہیں.

اپنا تبصرہ بھیجیں